Monday, February 06, 2012

. . . . . .( شناسا ). . . . . .

. . . . . .( شناسا ). . . . . .

کل ترے شہر کا اک شخص ملا جو مجھ سے
. .
باتوں باتوں میں ترا ذکر بھی ظالم نے کیا
. .
نام کیا آیا ترا اس کے لبوں پر جاناں
. .
جس طرح روح کسی جسم سے کھنچ کر آۓ
. .
یوں لگا موت کے ساۓ میرے سر پر آۓ
. .
پھر ترے پیار کی پازیب اچانک چھنکی
. .
پھر مرا وہم دلاسوں کی حدوں سے نکلا
. .
پھر مری آنکھ میں ساون کے کٹورے چھلکے
. .
پھر مری جاں پہ قیامت کی گھڑی آ ٹھہری
. .
پھر مرے دل نے عجب مانگی دعا مالک سے
. .
آج کے بعد ترا ذکر کرے نہ کوئ
. .
آج کے بعد ترا کوئ شناسا نہ ملے . .